اہم مواد پر جائیں

آپ کا خیر مقدم ہے

ٹوگیدر، بچوں کو ہونے والے کینسر کے شکار کوئی بھی شخص - مریضوں اور ان کے والدین، اراکین اہل خانہ، اور دوستوں کے لیے ایک نیا وسیلہ ہے۔

مزید جانیں

ٹیسٹ نتائج کا انتظار کرنا

یہ ورک اپ کیا ہے؟

"ورک اپ" ایک عام اصطلاح ہے جو ڈاکٹر بعض اوقات تشخیص کے لیے استعمال ہونے والے طریقہ کار کے سلسلے کو بیان کرنے کے لئے استعمال کرتے ہیں۔ اس عمل میں وقت لگتا ہے۔ 

خون کے ٹیسٹ اور ایکسرے جیسے متعدد طریقہ ہائے کار کلینک میں ایک ہی بار آنے پر ہوسکتے ہیں۔ کچھ ٹیسٹ جیسے سی ٹی اسکین، ایم آر آئی، اور بائی اوپسیز کسی اور وقت کے لیے شیڈول ہونی چاہئے۔ اہل خاندان ان کے حصول کے لئے دیگر مراکز پر جاسکتے ہیں۔ 

بہت سے لوگوں کا کہنا ہے کہ ٹیسٹ نتائج کا انتظار تشخیصی عمل کے سب سے زیادہ دباؤ والے حصوں میں سے ایک ہے۔ یہ ٹیسٹ کی قسم پر موقوف ہے، نتائج سامنے آنے میں چند گھنٹوں سے لے کر چند ہفتے لگ سکتے ہیں۔

ایک ڈاکٹر معلومات پر گفتگو کرنے سے پہلے ٹیسٹ کے تمام نتائج کی واپسی تک انتظار کرسکتا ہے۔ یہ جانچ کی قسم پر موقوف ہے، نتائج تیار ہونے میں چند گھنٹوں سے لے کر چند ہفتوں تک کا وقت لگ سکتا ہے۔ اس تصویر میں، ایک باپ اپنے بیٹے کو ایک ریڈ ویگن میں ہسپتال کے دالان سے گھسیٹتا ہے۔

ایک ڈاکٹر معلومات پر گفتگو کرنے سے پہلے ٹیسٹ کے تمام نتائج کی واپسی تک انتظار کرسکتا ہے۔ یہ جانچ کی قسم پر موقوف ہے، نتائج تیار ہونے میں چند گھنٹوں سے لے کر چند ہفتوں تک کا وقت لگ سکتا ہے۔

نتائج میں وقت کیوں لگ سکتا ہے

جب کوئیامیجنگ ٹیسٹ کیا جاتا ہے تو، ایک ریڈیولاجسٹ کو ان تصاویر کو پڑھنا اور تجزیہ کرنا چاہیے اور ٹراہم کنندہ کو دینے کےلئے جس نے ٹیسٹس کرنے کی ہدایات دی ہوں ایک رپورٹ تیار کرنا چاہیے۔ اس عمل میں کئی دن لگ سکتے ہیں۔ امیجنگ ٹیسٹ کی مثالوں میں شامل ہیں ایکسرے، الٹرا ساؤنڈ، کمپیوٹیڈ ٹیموگرافی سی ٹی (CT) اسکین، اور میگنیٹک ریزونینس امیجنگ (MRI) ۔

اگر کوئی بائی اوپسی کی جاتی ہے تو نتائج میں کچھ دن سے لے کر چند ہفتوں کا وقت لگ سکتا ہے۔ نمونہ تجزیہ کے لیے پیتھالوجی لیبارٹری میں بھیجا گیا ہے۔ بعض اوقات اسے اضافی ٹیسٹنگ کے لیے دیگر مخصوص لیبارٹریوں میں بھیجا جاسکتا ہے۔

اکثر اوقات، ایک ڈاکٹر معلومات پر گفتگو کرنے سے پہلے ٹیسٹ کے تمام نتائج کی واپسی تک انتظار کرسکتا ہے۔ ایک ٹیسٹ کے نتائج اس وقت تک کئی جوابات فراہم نہیں کرسکتے جب تک کہ اس پر دیگر تمام ٹیسٹوں کے حوالے سے جو بچے کے سلسلے میں کئے گئے ہوں نظر ثانی نہ کی جائے

صرف اس وجہ سے کہ ڈاکٹر نے کینسر کی علامات معلوم کرنے کے لیے ٹیسٹوں کی ہدایات دی ہیں اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ کینسر کی تشخیص ہوچکی ہے۔ فراہم کنندہ کو کینسر کا شبہ ہوسکتا ہے یا امکانی طور پر اس کو مسترد کرنا چاہتا ہے۔

اسکینکسائٹی کیا ہے؟

ٹیسٹوں سے وابستہ بے چینی اور اضطراب اور اسکین کے نتائج کا انتظار کرنے کا بھی ایک نام رکھا گیا ہے_ اسکینکسائٹی۔ اس اصطلاح نے ابھی تک اسے کسی لغت میں سرکاری طور پر جگہ نہیں بنائی ہے لیکن اس کا استعمال مریض، اہل خانہ اور طبی پیشہ ور افراد غیر رسمی طور پر کیا جاتا ہے۔

Urbandictionary.com کی یہ تعریف ہے: بے چینی اور اضطراب جو طبی معائنے سے گزرنے یا اس کا نتیجہ حاصل کرنے سے پہلے وقتا فوقتا پیدا ہوتا ہے۔ اسکینکسائٹی عام ہے اور، اگر بہت زیادہ نہیں تو، کئی مریضوں اور اہل خانہ کو اس سے سابقہ پڑتا ہے۔

‘اسکینکسائٹی’ ایک غیر رسمی اصطلاح ہے جو اس بےچینی کو بیان کرنے کے لئے استعمال ہوتی ہے جو نتائج کے انتظار میں بہت سارے مریضوں اور اہل خانہ میں پائی جاتی ہے۔ اس تصویر میں، بچوں کے کینسر کا ایک مریض کلینک کے انتظار کے علاقے میں مچھلی کا ایک ٹینک دیکھ رہا ہے۔

‘اسکینکسائٹی’ ایک غیر رسمی اصطلاح ہے جو اس بےچینی کو بیان کرنے کے لئے استعمال ہوتی ہے جو طبی معائنے کے نتائج حاصل کرنے سے قبل بہت سارے مریضوں اور اہل خانہ میں پائی جاتی ہے۔

‘اسکینکسائٹی’ سے نمٹنے کے طریقوں میں شامل ہوسکتے ہیں:

  • اپنی پسند کی سرگرمیوں میں رکاوٹ - لطف اندوز کرنے والی کچھ چیزوں کو وقت دینا آپ کو اسکین سے قبل اور نتائج کے انتظار کے دوران دنوں اور ہفتوں میں آپ کی توجہ کسی دوسری طرف لے جاتا ہے۔
  • ورزش - بہت سارے مطالعہ جات سے معلوم ہوا ہے کہ تناؤ اور اضطراب کو کم کرنے میں ورزش نہایت موثر ہے۔
  • آرام کی تکنیک - گہری سانس لینے کی کوشش کریں، سکون آور موسیقی سنیں، ذہنی تصور، یوگا، مراقبہ، مساج، یا تائی چی جیسی تکنیکوں پر عمل کرٰیں۔
  • اضطراب کو تسلیم کرنا اور قبول کرنا - اکثر اپنے جذبات کا اعتراف کرنا ان سے نمٹنے میں مددگار ثابت ہوتا ہے۔ اپنے آپ کو یاد دلائیں کہ کشیدگی کے وقت اسکینکسائٹی ایک عام ردعمل ہے۔
  • سماجی مدد حاصل کریں - کشیدگی کے وقت دوسروں سے بات کرنا فائدہ مند ثابت ہوسکتا ہے۔ پرسکون اور معاون خاندانی ممبران اور دوستوں کی شناخت کریں جن سے آپ اسکینکسائٹی کے بارے میں بات کرنے میں سب سے زیادہ اطمینان محسوس کریں گے۔
  • وقت سے پہلے منصوبہ بندی کریں - ایسے وقت میں اسکین شیڈول کریں جو کم سے کم دباؤ والا ہو۔ یہ بھی منصوبہ بندی کریں کہ اسکین سے پہلے، ان کے دوران اور بعد ازاں آپ کون سے آلات اور وسائل استعمال کریں گے۔ اسکین کے بعد کچھ تفریح ​​کرنے کا منصوبہ بھی بنائیں۔
  • نتائج کے لیے تیار رہیں - یہ جانئے کہ آپ انہیں کب اور کیسے حاصل کریں گے۔ موزوں نتائج کی توقع رکھیں لیکن خدا نخواستہ بدترین صورت حال کے لیے بھی منصوبہ بندی کریں۔ نتائج کا انتظار کرنا کسی کو یہ احساس دلاسکتا ہے کہ صورت حال پر ان کا کوئی اختیار نہیں ہے۔ منصوبہ بنانا آپ کو حالات پر قابو پانے کا احساس دلاتا ہے۔
  • دوسروں کی مدد کریں - ضرورت مند لوگوں کی مدد کرنے پر اپنی توجہ مرکوز کرنے کا عمل آپ کی توجہ کو ذہنی دباؤ سے دور رکھ سکتا ہے۔
  • پیشہ ورانہ مدد حاصل کریں - اگر اسکینکسائٹی بہت زیادہ ہوجائے اور وسائل سے نمٹنے میں مدد نہیں مل رہی ہو تو اپنے بنیادی نگہداشت کے فراہم کنندہ سے بات کریں۔ آپ نگہداشت کا ایک منصوبہ تشکیل دینے کے لیے مل کر کام کرسکتے ہیں، جس میں کسی مشیر یا دماغی صحت سے متعلق دیگر پیشہ ور افراد کی اضافی مدد کے لیے ایک ریفرل شامل ہوسکتا ہے۔
جن سرگرمیوں سے آپ لطف اندوز ہوتے ہیں ان سے ‘اسکینکسائٹی’ میں خلل پڑنے میں مدد مل سکتی ہے۔

جن سرگرمیوں سے آپ لطف اندوز ہوتے ہیں ان سے ‘اسکینکسائٹی’ میں خلل پڑنے میں مدد مل سکتی ہے۔

مفید مضامین


نظر ثانی شدہ: اگست 2018